گائڈ

سنگھار میز کے سامنے کھڑی وہ اپنے بالوں میں برش پھیر رہی تھی۔ اس نے بالوں کو اونچا اٹھا کہ انھیں ربڑ بینڈ میں مقید کر دیا۔ بال ایسے کہ گویا رپشم کی لڑیاں ہوں ۔ سیدھے لمبے اور بھاری بال اسکی کمر تک آ رہے تھے۔

گمان

گاڑی بہت تیز چل رہی تھی وہ بار بار بریک لگانے کی کوشش کر رہا تھا لیکن گاڑی رک ہی نہیں رہی تھی۔ اس نے ہینڈ بریک بھی کھینچی مگر ندارند ۔ خوف اور گھبراہٹ سے وہ بے حال گاڑی کو قابو میں رکھنے کی پوری کوشش کر رہا تھا کہ اچانک آگے ایک ٹرک آ گیا۔